Hamarey Hakim

A beautiful poetic description of present day Sultan’s.

By Mirza Ashraf.

 حا کم
یہ  آ  رہی  ہے  صدا  ہر طرف  سے  کانوں  میں

جو کل تھے  چور لُٹیرے  ہیں  حکمرانوں  میں

yeh a’a rahi hai sdaa her tarf se kanoon mein

jo kel thay chor lutairay hain hukmranoon mein
چُنا   ہے   شان   سے  رہزن  کو  رہبر ِ ملت

کرامتیں   ہیں  یہ  جمہور  کے  ایوانوں  میں

chuna hai shaan se rehzan ko rehbray millat

kramtain hein yeh jamhoor ke awanoon mein
خدا   کرم کرے  ان سیدھے سادھے  لوگوں  پر

کہ  ڈھونڈتے ہیں مسیحا کو بھی شیطانوں میں

khuda karam keray in sedhay saadhay logoon per

keh dhondhtay hain masehaa ko bhi shaitanoon mein
عجب ہے دور ِ خوشی  ذوق  و  شوق ِ شیرینی

اُڑا رہے  ہیں  مٹھائیاں  لُٹے  گھرانوں  میں

ajab hai daur-e-khushi zauq-o-shauq-e-shereeni

udaa rahay hain mitthaiyan lutay gharanoon mein
وہ آئے بانٹیں مٹھائی وہ جائے بانٹیں مٹھائی

یہی ریلیف  کا  پیکیج  ہے  خوشگمانوں  میں

wo a’ay bantain mitthai wo ja’ay bantain mitthai

yehi relief ka package hai khushgumanoon mein
عظیم  لوگ  ہیں اس ملک  و قوم  کے اشرف

ہیں ایسے ویسے سبھی ان کے پاسبانوں میں

azeem log hain es mulk-o-qaum key Ashraf

hain esay wesay sabhi in key pasbaanoon mein

(اشرف)

One thought on “Hamarey Hakim

  1. Let’s see who distributes sweets tomorrow. If NS is disqualified Qatar will issue him a workers permit.

Comments are closed.