Khalil Gibran’s Poem

Shared by, Mirza Ashraf.

I had posted this poetic translation of Khalil Gibran’s famous poem couple of years ago. However, what is happen today, I think it will be of great interest to know what the wise Gibran had said about nations.

خلیل جبران سے ترجمہ
صد حیف  کہ  اُس  قوم  کا  وقار  نہیں  ہے
دیں پر تو یقیں عمل میں دیندار نہیں  ہےہر چند دبی  دل میں  ہو ایماں  کی حرارت
بے  سود  ہے گر  بر  سرِ پیکار   نہیں   ہےافسوس  کہ غیروں  کے لبادے میں  ہے لپٹی
جو  رزق  کمایا  نہ  ہو  ،  حقدار  نہیں  ہے

اس  پر  یہ  ستم  ابلہے سرور  کی  پرستش
ظاہر  کی  چمک  طینت ِ  دلدار  نہیں  ہے

سیاست ہو مکاری جہاں عالِم  ہو مداری
ملت  کی امامت  کا  یہ  کردار  نہیں  ہے

لاشوں کے اٹاو میں  بھی سر پیر نہ  دیکھے
سرخوش ہو خرابات میں بیدار  نہیں  ہے

سر سُرک  میں  آئے  تو  وہ  آواز  اُ ٹھائے
شمشیر ِ مزاحمت کی طلب گار نہیں  ہے

پلکیں بھی بچھا دے نئے سردار کی راہ میں
دشنام دے رخصت کرے  سردار نہیں  ہے

حیراں ہوں عجب بات ہے ہر فرد ہے قومی
اک قوم میں  ڈھلنے کو یہ تیار  نہیں  ہے

قوموں کا فسانہ  لکھا  جبران  نے دل  سے
ہم  میں تو  یہاں طاقت ِ اظہار  نہیں  ہے

گر ایک ہو یہ اُمت ِ مسلم  یہاں اشرف
قوموں  کے فسانوں سے سروکار  نہیں  ہے
(اشرف)

One thought on “Khalil Gibran’s Poem

Leave a Reply