Mirza I Ashraf’s Ghazal inspired by the first verse of Iqbal

Inspired by the first verse of Iqbal (in Persian) in his Javed Nama I said a ghazal which I am sending you.

اقبال
من نیابم از حیات ایںجا نشاں
از کجا مے آئید آواز ِ اذاں

I don’t see any sign of life at this place
From where the voice of Adhan is coming

My Ghazal on the same subject of Iqbal:

غزل
زندگی  کا  اس جگہ  ملتا  نہیں  نام  و  نشاں
پھر کہاں  سے آ رہی  ہے  مجھ  کو  آوازِ  اذاں

سُنتا  ہوں  اللہ و اکبر دیکھ  کیوں سکتا  نہیں
آنکھ  رکھتا ہوں نظر آتا  نہیں  کچھ  بھی یہاں

شکر  کر سُنتا  ہے تو آئی صدا یہ غیب  سے
ورنہ اندھوں اور  بہروں سے بھرا  ہے  یہ جہاں

مرد ِ ناداں  آنکھ  تیری محوِّ منظر  ہے  یہاں
دل کی آنکھیں کھول اور پھردیکھ سب جلوا عیاں

پردہ در پردہ ہیں  پنہاں  رازہائے ِ زندگی
دیکھتے ہیں چشم ِمعنی سے اُنہیں دیدہ وراں

جو اذاں دل میں اتر جاتی ہے اشرف بے گماں
دل کے آئینے میں آتا ہے  نظر اس  کا نشاں
                                       اشرف