A Ghazal by Iqbal Sheikh

 A Ghazal by Iqbal Sheikh

قول اور فعل میں ہیں تضادات دوستو

مقصود فکرِ روزِ مکافات دوستو

کیا قیمتِ خرید ہو کیا قیمتِ فروختr

اِک کشمکش ہے بینِ حسابات دوستو

مسدود نہ ہوں سوچ کی راہیں دھیاںرہے

محدود ہو نہ پائیں سوالات دوستو

ہم راز و ہم نوا مرا دل ہے تو ہمارے

ٹکرا رہے ہیں پھر کیوں مفادات دوستو

سو لات سو منات تھے سب ڈھیر کردئے

اب اِک منات ہے مرا اِک لات دوستو

کیا ڈھیٹ مسلمان ہوں ! کھاتا ہوںپیٹھ پر

کفّار کی ہر روز نئی لات دوستو

کیا تجربات کیا مری اوقات دوستو

پرکھوں خدائے ارض و سماواتدوستو

میرے خدا کی غیروں پہ اقبال عنایات

اپنوں کیلئے مرگِ مفاجات دوستو

A Rubbai by Mirza Ashraf

ربآعی

ابھی تو ہم پہ ہے ٹوؤِن ٹاورکے آسیب کا سایہ
abhi to hum pe hai twin tower kay aasaib ka sayah


کہ ٹرمپ ٹاور پہ دکھتا ہے نئے آسیب کا سایہ
keh Trump Tower pe dekhta hai na’y aasaib ka sayah


مگر اشرف نہیں ہم کو کسی آسیب سے خطرہ
magar Ashraf naheen hum ko ksi aasaib se khtrah


کہ خود آسیب ہم آسیب گر آسیب کا سایہ
keh khud aasaib hum aasaib gar aasaib ka sayah

اشرف

A TRIBUTE TO ISMAT CHUGHTAI

Shared by Nasar Aslam

ساہتیہ اکاڈمی ،نئی دہلی کے زیرِاہتمام کلکتہ میں ”ماہنامہ انشاء” کے اشتراک سے منعقدہ دو روزہ ” عصمت چغتائی صدی قومی سمینار کا پروگرام بھارتیہ بھاشا پریشد مین آڈیٹوریم،شیکسپیئر سرانی میں بے حد کامیاب رہا۔ ساہتیہ اکاڈمی کے سکریٹری جناب کے سری نواسا راؤ نے استقبالیہ تقریر میں حاضرین کا خیر مقدم کیااورعصمت چغتائی کے مقام و مرتبہ کا تعین کر تے ہوئے ۔۔۔۔۔  تفصیل کے لیے لنک ملاحظہ کریں
http://www.urduhamasr.dk/dannews/index.php?mod=article&cat=Literature&article=1611

Ghalib’s Birth Anniversary

December 27 is Mirza Ghalib’s birth anniversary. To pay homage to Mirza Ghalib, the greatest ghazal-go in history I have attempted to say a ghazal in his style.

غزل عالَم  شگفتہ ہو کہ  میں آفت رسیدہ  ہوں          اس دشتِ بےسپرمیں جوں صیدِجریدہ ہوں
ڈرتا رہا  میں  راندہ ء رضواں  کے نیش سے           ہاے  ستم  تو دیکھ  کہ  مردم گزیدہ  ہوں
آ  عندلیب  مل   کے   کریں   نالہ   زاریاں           میں  بھی تو باغبانِ چمن سے  رنجیدہ  ہوں
ہے  میری  کوتہ دستی کہ  انکے بلند بخت             اس  بیدلی و شرم  سے  ہی آب دیدہ  ہوں
تو ہی بتا میں کیسے تیرے در کا نام  لوں            ہراک سمجھ رہا ہے کہ مجنوں شوریدہ ہوں
اشرف یہاں تو  بات  بھی کرنی  ہے  نا روا      چپ  رہ اسی گماں میں  زبان ِ بُریدہ         ہوں                                      (اشرف)