Hamarey Hakim

A beautiful poetic description of present day Sultan’s.

By Mirza Ashraf.

 حا کم
یہ  آ  رہی  ہے  صدا  ہر طرف  سے  کانوں  میں

جو کل تھے  چور لُٹیرے  ہیں  حکمرانوں  میں

yeh a’a rahi hai sdaa her tarf se kanoon mein

jo kel thay chor lutairay hain hukmranoon mein
چُنا   ہے   شان   سے  رہزن  کو  رہبر ِ ملت

کرامتیں   ہیں  یہ  جمہور  کے  ایوانوں  میں

chuna hai shaan se rehzan ko rehbray millat

kramtain hein yeh jamhoor ke awanoon mein
خدا   کرم کرے  ان سیدھے سادھے  لوگوں  پر

کہ  ڈھونڈتے ہیں مسیحا کو بھی شیطانوں میں

khuda karam keray in sedhay saadhay logoon per

keh dhondhtay hain masehaa ko bhi shaitanoon mein
عجب ہے دور ِ خوشی  ذوق  و  شوق ِ شیرینی

اُڑا رہے  ہیں  مٹھائیاں  لُٹے  گھرانوں  میں

ajab hai daur-e-khushi zauq-o-shauq-e-shereeni

udaa rahay hain mitthaiyan lutay gharanoon mein
وہ آئے بانٹیں مٹھائی وہ جائے بانٹیں مٹھائی

یہی ریلیف  کا  پیکیج  ہے  خوشگمانوں  میں

wo a’ay bantain mitthai wo ja’ay bantain mitthai

yehi relief ka package hai khushgumanoon mein
عظیم  لوگ  ہیں اس ملک  و قوم  کے اشرف

ہیں ایسے ویسے سبھی ان کے پاسبانوں میں

azeem log hain es mulk-o-qaum key Ashraf

hain esay wesay sabhi in key pasbaanoon mein

(اشرف)

Modern progressive URDU poetry

Shared by Wequar Azeem!
Modern progressive URDU poetry
*کرو،،،، حُسنِ یار کا تذکرہ*
*تمہیں کیا پڑی ہے کہ رات دن*
*کہو،،،،،، حاکموں کو بُرا بھلا*
*تمہیں،،، فکرِ عمرِ عزیز ہے*
*تو نہ حاکموں کو خفا کرو*
*جو امیرِ شہر کہے تُمہیں*
*وہی شاعری میں کہا کرو*
*کوئی واردات کہ دن کی ہو*
*کوئی سانحہ کسی رات ہو*
*نہ امیرِ شہر کا زکر ہو*
*نہ غنیمِ وقت کی بات ہو*
*کہیں تار تار ہوں،، عصمتیں*
*میرے دوستوں کو نہ دوش دو*
*جو کہیں ہو ڈاکہ زنی اگر*
*تو نہ کوتوال کا،،،،، نام لو*
*کسی تاک میں ہیں لگے ہُوئے*
*میرے جاں نثار،،،،، گلی گلی*
*ہیں میرے اشارے کے مُنتظر*
*میرے عسکری میرے لشکری*
*جو تُمہارے جیسے جوان تھے*
*کبھی،،، میرے آگے رُکے نہیں*
*انہیں اس جہاں سے اُٹھا دِیا*
*وہ جو میرے آگے جُھکے نہیں*
*جنہیں،، مال و جان عزیز تھے*
*وہ تو میرے ڈر سے پِگھل گئے*
*جو تمہاری طرح اُٹھے بھی تو*
*اُنہیں بم کے شعلے نگل گئے*
*میرے جاں نثاروں کو حُکم ہے*
*کہ،،،،،، گلی گلی یہ پیام دیں*
*جو امیرِ شہر کا حُکم ہے*
*بِنا اعتراض،، وہ مان لیں*
*جو میرے مفاد کے حق میں ہیں*
*وہی،،،،،،، عدلیہ میں رہا کریں*
*مجھے جو بھی دل سے قبول ہوں*
*سبھی فیصلے،،،،،،، وہ ہُوا کریں*
*جنہیں مجھ سے کچھ نہیں واسطہ*
*انہیں،،،، اپنے حال پہ چھوڑ دو*
*وہ جو سرکشی کے ہوں مرتکب*
*انہیں،،،،، گردنوں سے مروڑ دو*
*وہ جو بے ضمیر ہیں شہر میں*
*اُنہیں،،،، زر کا سکہ اُچھال دو*
*جنہیں،،،،، اپنے درش عزیز ہوں*
*اُنہیں کال کوٹھڑی میں ڈال دو*
*جو میرا خطیب کہے تمہیں*
*وہی اصل ہے، اسے مان لو*
*جو میرا امام،،،،،،، بیاں کرے*
*وہی دین ہے ، سبھی جان لو*
*جو غریب ہیں میرے شہر میں*
*انہیں بُھوک پیاس کی مار دو*
*کوئی اپنا حق جو طلب کرے*
*تو اسے،، زمین میں اتار دو*
*جو میرے حبیب و رفیق ہیں*
*انہیں، خُوب مال و منال دو*
*جو، میرے خلاف ہیں بولتے*
*انہیں، نوکری سےنکال دو*
*جو ہیں بے خطاء وہی در بدر*
*یہ عجیب طرزِ نصاب ہے*
*جو گُناہ کریں وہی معتبر*
*یہ عجیب روزِ حساب ہے*

A list of few questions by Iqbal Sheikh

تال و سُر دونوں کا محتاج ہر نغمہکیوں ہے

لمسِ مضراب سے ہی تار تھرکتا کیوںہے

روشنی اور اندھیرے میں ہے نسبتکیسی

آسماں شام و سحر رنگ بدلتا کیوں ہے

خود نمائی ترا مقصد نہیں تو پھر اےخُدا

کائناتی ترا یہ کھیل تماشہ کیوں ہے

تیز مضراب کی شدت سے کیوں لٓےہوتی ہے

ایسا بس میری ہی اس دُنیا میں ہوتاکیوں ہے

اتنی خاموش لپٹتی ہوئی بل کھاتیہوئی

کہکشاؤں کی یہ رنگین سی دُنیا کیوںہے

چُپ رہو ! تُم نے کیا اقبال رٹ لگائیہے

ایسا یہ کیوں ہے بھلا اور یہ ویساکیوں ہے