Modern progressive URDU poetry

Shared by Wequar Azeem!
Modern progressive URDU poetry
*کرو،،،، حُسنِ یار کا تذکرہ*
*تمہیں کیا پڑی ہے کہ رات دن*
*کہو،،،،،، حاکموں کو بُرا بھلا*
*تمہیں،،، فکرِ عمرِ عزیز ہے*
*تو نہ حاکموں کو خفا کرو*
*جو امیرِ شہر کہے تُمہیں*
*وہی شاعری میں کہا کرو*
*کوئی واردات کہ دن کی ہو*
*کوئی سانحہ کسی رات ہو*
*نہ امیرِ شہر کا زکر ہو*
*نہ غنیمِ وقت کی بات ہو*
*کہیں تار تار ہوں،، عصمتیں*
*میرے دوستوں کو نہ دوش دو*
*جو کہیں ہو ڈاکہ زنی اگر*
*تو نہ کوتوال کا،،،،، نام لو*
*کسی تاک میں ہیں لگے ہُوئے*
*میرے جاں نثار،،،،، گلی گلی*
*ہیں میرے اشارے کے مُنتظر*
*میرے عسکری میرے لشکری*
*جو تُمہارے جیسے جوان تھے*
*کبھی،،، میرے آگے رُکے نہیں*
*انہیں اس جہاں سے اُٹھا دِیا*
*وہ جو میرے آگے جُھکے نہیں*
*جنہیں،، مال و جان عزیز تھے*
*وہ تو میرے ڈر سے پِگھل گئے*
*جو تمہاری طرح اُٹھے بھی تو*
*اُنہیں بم کے شعلے نگل گئے*
*میرے جاں نثاروں کو حُکم ہے*
*کہ،،،،،، گلی گلی یہ پیام دیں*
*جو امیرِ شہر کا حُکم ہے*
*بِنا اعتراض،، وہ مان لیں*
*جو میرے مفاد کے حق میں ہیں*
*وہی،،،،،،، عدلیہ میں رہا کریں*
*مجھے جو بھی دل سے قبول ہوں*
*سبھی فیصلے،،،،،،، وہ ہُوا کریں*
*جنہیں مجھ سے کچھ نہیں واسطہ*
*انہیں،،،، اپنے حال پہ چھوڑ دو*
*وہ جو سرکشی کے ہوں مرتکب*
*انہیں،،،،، گردنوں سے مروڑ دو*
*وہ جو بے ضمیر ہیں شہر میں*
*اُنہیں،،،، زر کا سکہ اُچھال دو*
*جنہیں،،،،، اپنے درش عزیز ہوں*
*اُنہیں کال کوٹھڑی میں ڈال دو*
*جو میرا خطیب کہے تمہیں*
*وہی اصل ہے، اسے مان لو*
*جو میرا امام،،،،،،، بیاں کرے*
*وہی دین ہے ، سبھی جان لو*
*جو غریب ہیں میرے شہر میں*
*انہیں بُھوک پیاس کی مار دو*
*کوئی اپنا حق جو طلب کرے*
*تو اسے،، زمین میں اتار دو*
*جو میرے حبیب و رفیق ہیں*
*انہیں، خُوب مال و منال دو*
*جو، میرے خلاف ہیں بولتے*
*انہیں، نوکری سےنکال دو*
*جو ہیں بے خطاء وہی در بدر*
*یہ عجیب طرزِ نصاب ہے*
*جو گُناہ کریں وہی معتبر*
*یہ عجیب روزِ حساب ہے*