شکستہ پا تھا

A Ghazal by Iqbal Sheikh

 

چڑھا ہوں قرض کی صُورت تو پھر سرسے اُتار دے

لگا کر داؤ میرا پیار کی بازی میں ہار دے

ابھر سکے نہ کوئی نقش نہ چہرہ ترے سوا

تُو اپنا عکس  میرے آئینے میں یوں  اُتار دے

شکستہ پا تھا پیچھے رہ گیا ہوں  کارواں سے میں

پتہ کچھ قافلے کا تُو ہی اب گرد و غبار دے

بچا نہ نقد میری جیب میں کچھ زندگی میری

جو ہو ممکن تو جینے کیلئے تھوڑااُدھار دے

تمناؤں کے صحراؤں میں تشنہ پھر رہا ہوں میں

سرابوں کی رفاقت دیکھئے کس وقت مار دے

محبت سے بڑھا ہےہاتھ جب اُس کا تری جانب

تو پھر اقباؔل تُو بھی دوستی کو اعتبار دے